Molana Fazal Ur Rehman مولانا فضل الرحمان کی فسادی سیاست کی حقیقت

سیاست اور احتجاج ہر پاکستانی کا بنیادی حق ہے ۔۔ مگر سیاست اور فساد میں باریک لائین ہے اگر اس کو پار کریں تو فساد بن جاتا ہے ۔ ٹی ٹی پی اور دوسرے دہشت گرد اسلام کا نام لے کر کھڑے ہوئے اور 70000 معصوم پاکستانیوں کا خون اور 100 ارب ڈالر کا نقصان کر گئیے ۔۔ ان سے شروع میں نپٹ لیا جاتا تو ہم یہ نقصان نہ اتھاتے۔

دینِ کافر فکر و تدبیرِ جہاد
دینِ مُلا فی سبیلِ اللہ فساد (علامہ اقبال)

اب جبکہ آنڈیا کشمیر ہڑپ کر رہا ہے ۔۔ LOC پر شدید جھڑپیں ہو رہی ہی۔ تمام دنیا کا میڈیامعصوم کشمیریوں کے لئیے آواز اٹھا رہا ہے ۔۔۔ سیاست کے نام پر اسلام آباد پر حملہ کردیا گیا ہے ۔۔
ہر چیز کا ایک وقت ہوتا ہے ۔۔ اگر کوئی حالات کی نزاکت کو نہیں سمجھتا اور ملک کی سلامتی کو داو پر لگاتا ہے ، ہر ایسا کام کرتا ہے جس سے دشمن کو فائدہ پہنچے اس کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا ۔۔
امید ہے کہ ریاست پاکستان اس اسلامی مملکت کی حفاظت کی ذمہ داری پوری کرے گی ۔۔۔
ہم کو ریاست پاکستان کے دفاع میں ان کی مدد کرنا ہے ۔۔ سوشل میڈیا پر بھی ۔۔۔
پاکستان زندہ باد 🇵🇰👍😎🗡💻🖥✒
مزید ۔》》》》》 https://salaamone.com/seyasi-molana/
مولانا کی پگڑی میں کفر کا رنگ ۔۔۔ حدیث کے خلاف ۔۔ یہ کیا ہے ؟

حدیث نمبر: 1725
حدثنا قتيبة، حدثنا مالك بن انس، عن نافع، عن إبراهيم بن عبد الله بن حنين، عن ابيه، عن علي، قال: ” نهاني النبي صلى الله عليه وسلم عن لبس القسي والمعصفر “، قال ابو عيسى: وفي الباب، عن انس، وعبد الله بن عمرو، وحديث علي حديث حسن صحيح.
علی رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے قسی کے بنے ہوئے ریشمی اور زرد رنگ کے کپڑے پہننے سے منع فرمایا ۱؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں:
۱- علی رضی الله عنہ کی حدیث حسن صحیح ہے،
۲- اس باب میں انس اور عبداللہ بن عمرو رضی الله عنہم سے بھی احادیث آئی ہیں۔
33823 – 1725
تخریج الحدیث: «انظر حدیث رقم 264 (صحیح)»
وضاحت: ۱؎: «معصفر» وہ کپڑا ہے جو عصفر سے رنگا ہوا ہو، اس کا رنگ سرخی اور زردی کے درمیان ہوتا ہے، اس رنگ کا لباس عام طور سے کاہن، جوگی اور سادھو پہنتے ہیں، ممکن ہے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے کے کاہنوں کا لباس یہی رہا ہو جس کی وجہ سے اسے پہننے سے منع کیا گیا۔
قال الشيخ الألباني: صحيح، ابن ماجة (3602) ، ويأتي بأتم (3637)

http://www.islamicurdubooks.com/hadith/mukarrat-.php…
حدیث نمبر: 5318
اخبرنا إسماعيل بن مسعود، قال: حدثنا خالد وهو ابن الحارث , قال: حدثنا هشام، عن يحيى بن ابي كثير، عن محمد بن إبراهيم , ان خالد بن معدان اخبره، ان جبير بن نفير اخبره: ان عبد الله بن عمرو، اخبره: انه رآه رسول الله صلى الله عليه وسلم وعليه ثوبان معصفران، فقال:” هذه ثياب الكفار , فلا تلبسها”.
عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو دیکھا، وہ دو کپڑے زرد رنگ کے پہنے ہوئے تھے، آپ نے فرمایا: ”یہ کفار کا لباس ہے، اسے مت پہنو“۔
31622 – 5318
تخریج الحدیث: «صحیح مسلم/اللباس4(2077)، (تحفة الأشراف: 8613)، مسند احمد (2/162، 164، 193، 207، 211) (صحیح)، قال الشيخ الألباني: صحيح

 

  1. کشمیر کے سوداگر Kashmir Betrayal
  2. Hitler’s Hindus : The Rise and Rise of India’s Nazi-loving Nationalists RSS in India | Haaretz ہٹلر کے ہندو: ہندوستان میں نازی محبت کرنے والے قوم پرست آر ایس ایس کا عروج हिटलर के हिंदू: द राइज़ एंड राइज़ ऑफ़ इंडियाज़ नाज़ी-लविंग नेशनलिस्ट्स आर एस एस इन इंडिया

  3. ففتھ جنریشن وار Hybrid War: جنگوں کے مورخین اور ماہرین نے تفہیم کی خاطر اب تک کی جنگوں کو پانچ حصوں میں تقسیم کیا ہے ۔ فرسٹ جنریشن وار ، سیکنڈ جنریشن وار ، تھرڈ جنریشن وار ، فورتھ جنریشن وار اور ففتھ جنریشن وار ۔ پانچ پیڑیوں میں تقسیم کے حوالے سے تو ماہرین متفق ہیں لیکن الگ الگ … Continue reading

Molana Fazal Ur Rehman مولانا فضل الرحمان کی مذہبی سیاست کی حقیقت