Directorate S: The C.I.A. and America’s Secret Wars in Afghanistan and Pakistan افغانستان اور پاکستان میں امریکہ کی خفیہ جنگیں

Directorate S, from which the book gets its title, lies buried deep in the bureaucracy of the ISI (Inter-Services Intelligence), Pakistan’s spy agency.

مصنف کے مطابق پاکستانی خفیہ ایجنسی کا وہ مبینہ سیکشن ہے جوافغان طالبان اور اس طرح کی دیگر عسکری تنظیموں سے ڈیل کرتا ہے۔  سٹیو کول کا انداز سنسنی خیز صحافیانہ اسلوب یا تھرلر فکشن کے بجائے سنجیدہ اور معروضی تجزیہ کا ہے۔ وہ چھوٹی چھوٹی کڑیاں جمع کرتے اور پھر ایک تصویر بنا کر پیش کرتے ہیں۔ اس میں امریکہ نقطہ نظر اور موقف البتہ واضح طور پر جھلکتا ہے، اس کی ہمیں توقع بھی کرنی چاہیے۔امریکیوں کے ساتھ افغانستان میں جو ہوا،اس کے بعدافغانستان کا نام آتے ہی کسی بھی امریکی کے لہجے میںتلخی آنا فطری ہے۔ اٹھارہ برس یہاں گزارنے، کئی سو ارب ڈالر(بعض اندازوں کے مطابق ایک ہزار ارب ڈالر سے زائد)خرچ کرنے ، بہت سی امریکی فوجیوں کی جانیں گنوانے کے بعد بھی امریکہ کچھ حاصل نہیں کر سکا۔… مکمل تبصرہ اردو میں آخر میں <<<<

Ensconced thus, the directorate works to “enlarge Pakistan’s sphere of influence in Afghanistan”. It goes about this task, Coll explains, by supplying, arming, training and generally seeking to legitimise the Taliban, the AK-47 toting terrorists who took over Afghanistan in 1992, stringing up decapitated corpses in town squares and shoving women into the confines of their homes. Nobody paid much attention then, and perhaps never would have, had the Taliban not become host to Osama bin Laden.

No man who has read a page of Indian history will ever prophesy about the Frontier. We shall doubtless have trouble there again.” So wrote Lord Curzon, then viceroy, in 1904. The British were by then a little weary of the burdens of empire; they were having trouble with the tribes people of the Frontier, who seemed uninterested in the sort of governance the colonialists wished for them. The smugly racist Curzon blamed it on the “fanaticism and turbulence” that “ferment in the blood” of the Pashtun. The neocolonialists of today cannot explain things away so easily. As Steve Coll documents in Directorate S, the current war has for ever altered the fates of all three countries involved – the US, Afghanistan and Pakistan – and, after 15 years, there is no end to the “trouble” in sight.

Bin Laden, the architect and financier of the 9/11 attacks, was the US’s most obvious target, and in order to get him, sights had to be set on Afghanistan. The scene Coll paints is riveting. In a house on the outskirts of Kandahar, the Taliban leader Mullah Mohammed Omar picks his toes while then-ISI chief Mahmud Ahmed tries to convince him to give up Bin Laden. It doesn’t happen, and neither Ahmed’s entreaties to the Americans (“I implore you not to fire a shot in anger”) nor his warnings (a strike will produce thousands of frustrated young Muslim men) nor his alternatives (reasoning with them will work better to get rid of terrorism) have any effect. The Americans ignore the lessons of history. George W Bush declares that the time for negotiating is over.

It is a tragic moment, not least because we know of the perfidy and pain to come. In the pages of Directorate S, the sequel to Coll’s Pulitzer prize-winning Ghost Wars, the story is delivered with a literary prowess that has been absent in previous western accounts of America’s longest running war. The dance of blame, with the US swaying at one moment towards Pakistan and the next towards Afghanistan, is a choreography familiar to CIA chiefs, US presidents and writers who have tackled the subject. Coll refuses to follow this tired tune, and the result is masterful.

Directorate S takes readers deep into the malevolent intrigues of spycraft with its cast of colourful characters: there is the Dunhill smoking spy chief Ashfaq Kayani; the fitness-obsessed, water-guzzling General David Petraeus; special envoy Richard Holbrooke, who calls his diplomacy “jazz improvisation”; not to mention such Taliban commanders as Omar, who makes off over the Pakistan border on a motorbike. The latter’s escape, Coll astutely notes, was a “lost opportunity”; had he been caught, it could have changed everything. The more notorious missed opportunity is the escape of Bin Laden from the Tora Bora cave complex a few months later. Coll recounts that, too, with fascinating details. For instance, just as General Tommy Franks is setting up a plan to get Bin Laden, a demanding Donald Rumsfeld calls and asks to see within the week war plans for the invasion of Iraq. For the Americans, it seems, Afghanistan was both a constant and an afterthought.

Directorate S provides telling background descriptions with just as much skill. When US soldiers run into an abandoned school for al-Qaida suicide bombers, they find that “the recruits studied in concrete rooms” the walls of which “were painted with murals of the afterlife”, in one “channels of milk and honey” and in another “paintings of virgin girls”. At the CIA, the Counter-Terrorism Center analysts hunt terrorists huddled over “low-grade industrial carpeting, cookie-cutter Government cubicles” in large rooms that are “poorly lit and smell sour”. In an attempt at relief, “someone had mounted fake windows looking out on beaches and palm trees”. Fantasy, it seems, is the fuel of both endeavours.

Then there are the absurdities: the supposedly indelible ink that washed off when Afghans went to vote in their first postwar election; the drone operators who hope dogs jump off the trucks at which they are about to fire missiles; and the mass of blunders that has killed 140,000 people but that US Isaf (International Security Assistance Force) commanders still describe as “a war to give people a chance”. In the 15-year story that Directorate S tells, Afghanistan has been built a bit and bombed a lot, the Taliban have been fought with and then courted, the Pakistanis embraced then abandoned. What the British tried to document in Curzon’s day the Americans refused to learn; there is indeed trouble on the Frontier again, and in Directorate S we have the definitive account of it.

• Directorate S is published by Allen Lane. To order a copy for £21.25 (RRP £25) go to bookshop.theguardian.com or call 0330 333 6846. Free UK p&p over £10, online orders only. Phone orders min p&p of £1.99..

https://www.theguardian.com/books/2018/jan/24/directorate-s-steve-coll-review


Directorate S
By Imran Jan

Steve Coll is a meticulous researcher, a seasoned journalist, an articulate author. In his latest book, which is a sequel to Ghost Wars, which focused on the background that led to 9/11, is called Directorate S.

It has the same Coll style of telling a story with perspective, stunning and relevant details, chilling facts, and entertaining like an espionage novel. However, despite my respect for Coll’s work, I was left disappointed with his bias. The same narrative is repeated that Washington’s troubles in Afghanistan are due to the ISI. Almost every time I walk into a book store in America, I watch on front display some kind of non-fiction with titles like Pakistan — the most dangerous country or Pakistan — an enemy not a friend.

In the introduction chapter, Coll talks that in 2004 “It seemed evident that ISI was, once again, interfering secretly in Afghanistan, exploiting the country’s fault lines, and that the US government, including the CIA, was again unable to forestall an incubating disaster.” While Coll comfortably calls ISI’s actions ‘interference’, I wonder if he would think of invading an entire country with dubious and changing war aims as a bigger crime? He doesn’t say so.

In the same chapter, he makes an unsuccessful attempt at appearing neutral by saying “Its [Afghanistan’s] several decades of civil war since that invasion [Soviet invasion] have been fueled again and again by outside interference, primarily by Pakistan, but certainly including the United States and Europe, which have remade Afghanistan with billions of dollars…” Again, interference is done ‘primarily’ by Pakistan, if we are to deeply internalise this concept that invasion doesn’t count as interference. Then he states that “If the army and ISI did not misrule Pakistan, in alliance with corrupt political cronies, the country’s potential to lift up its own population and contribute positively to the international system might today rival India’s.” What does contributing “positively to the international system” mean? Is that a code word for obeying Washington’s orders?

Further, in the chapter ‘Friends Like These’, Coll asserts that one factor due to which Pakistan supported the Taliban was because “Pakistan’s India-obsessed generals” wanted to intimidate India. Indian media never gets tired of tarnishing Pakistan and the ISI. They never leave any stone unturned to lobby in Washington against Pakistan. The book even mentions the basing rights India offered to President Bush for attacking Afghanistan and asserted that Pakistan was behind 9/11. I am sure even conspiracy theory lovers might have died laughing. Yet, it is Pakistan’s generals who are India obsessed in Coll’s mind.

Many American friends told me how 20 years ago nobody even knew what Pakistan was. Today, grab any political magazine or any newspaper copy in America and you’ll see detailed descriptions of streets of Peshawar. Grab any book written about Pakistan and you’ll find a grim description of the ISI’s old and new buildings. I was born and raised in Pakistan and I didn’t know there were old and new buildings. That written work can be used as a GPS if one plans on visiting Pakistan. That’s what I call being obsessed.

Coll doesn’t shy from speaking the truth about other issues. However, the changing war aims in Afghanistan, the super weak and dubious pretext for Afghanistan invasion, the illegal and inhuman Guantanamo Bay imprisonment and the refusal to obey the imperial nation’s orders receives the following treatment from Coll: “Under the emerging Bush doctrine, Omar’s refusal to cooperate in Bin Laden’s arrest condemned the Taliban to mass slaughter and indefinite imprisonment as enemy combatants. And the Taliban leader declined to yield.” Hypocrisy is when one refuses to apply to oneself the same standards one applies to others. Coll can find that definition in the Holy Bible.

Published in The Express Tribune

https://tribune.com.pk/story/1669809/6-directorate-s/

 


Directorate S

 

سٹیو کول معروف امریکی صحافی، ریسرچر اور ادیب ہیں، وہ امریکہ کا اعلیٰ ترین صحافتی ایوارڈ پلٹرز ایوارڈ جیت چکے ہیں، ان کی کتاب گھوسٹ وارز مشہور ہوئی تھی، ڈائریکٹوریٹ ایس Directorate S پچھلے سال شائع ہوئی اور عسکریت پسندی سے دلچسپی رکھنے والے حلقوں میں اس کا نوٹس لیا گیا۔
یہ کتاب افغانستان میں امریکی فوج کی آمد اور وہاں موجودگی کے گرد گھومتی ہے۔
امریکی وہاں کیوں کامیاب نہیں ہوسکے،
اس کی کیا وجوہات تھیں،
پاکستانی فوج اور پریمئیر ایجنسی کا کیا کردار تھا
اس دوران کیا اہم واقعات ہوئے
اس سب کا تجزیہ کیا گیا۔ کتاب کا نام *ڈائریکٹوریٹ ایس* ہے
*Directorate S*
مصنف کے مطابق یہ پاکستانی خفیہ ایجنسی کا وہ مبینہ سیکشن ہے جوافغان طالبان اور اس طرح کی دیگر عسکری تنظیموں سے ڈیل کرتا ہے۔ سٹیو کول کا انداز سنسنی خیز صحافیانہ اسلوب یا تھرلر فکشن کے بجائے سنجیدہ اور معروضی تجزیہ کا ہے۔ وہ چھوٹی چھوٹی کڑیاں جمع کرتے اور پھر ایک تصویر بنا کر پیش کرتے ہیں۔ اس میں امریکہ نقطہ نظر اور موقف البتہ واضح طور پر جھلکتا ہے، اس کی ہمیں توقع بھی کرنی چاہیے۔امریکیوں کے ساتھ افغانستان میں جو ہوا،اس کے بعدافغانستان کا نام آتے ہی کسی بھی امریکی کے لہجے میںتلخی آنا فطری ہے۔ اٹھارہ برس یہاں گزارنے، کئی سو ارب ڈالر(بعض اندازوں کے مطابق ایک ہزار ارب ڈالر سے زائد)خرچ کرنے ، بہت سی امریکی فوجیوں کی جانیں گنوانے کے بعد بھی امریکہ کچھ حاصل نہیں کر سکا۔
سٹیو کول کو یہ کریڈٹ دینا چاہیے کہ اس نے پاکستانی اداروں کے تحفظات کو بھی بیان کیا اور بعض جگہوں پر غیر جانبداری سے انہیں تسلیم بھی کیا۔ امریکی ناکامیوں پربھی اس نے پردہ نہیں ڈالا۔ اس کتاب کے حوالے سے امریکہ میں بعض تقریبات ہوئیں، جن میں مصنف نے گفتگو کی۔ یوٹیوب پر انہیں دلچسپی سے سنا۔ سٹیو کول نے ایک تقریر میں کہا کہ
امریکہ کے(عسکری، سفارتی حلقوں میں) افغانستان جانے کے دو مقاصد بیان کئے جاتے ہیں،پہلا
طالبان حکومت ختم کرنا تاکہ القاعدہ کا خاتمہ یا اسے اتنا کمزور کیا جا سکے کہ وہ دوبارہ امریکہ پر نائن الیون جیسا حملہ نہ کر سکے
*دوسرا اسے یقینی بنانا کہ پاکستان کے ایٹمی ہتھیار کسی دہشت گرد گروہ کے ہاتھ نہ لگ جائیں تاکہ وہ دنیا کے امن کے لئے خطرہ نہ بن سکیں*
۔اس نکتے نے مجھے چونکایا کہ امریکی ماہرین اب یہ اعلانیہ مان رہے ہیں کہ پاکستانی ایٹمی ہتھیار وں پر نظر رکھنا بھی افغانستان آنے کا ایک مقصد تھا۔
ظاہر ہے نظر رکھنے کا اگلا مرحلہ ان ہتھیاروں کو اپنی تحویل میں لینا ہی ہوتا ہے۔
یہ بات ہمارے ان’’ بھولے بادشاہوں‘‘ کی آنکھیں کھولنے کے لئے کافی ہے، جن کے خیال میں پاکستان کو افغان طالبان کا ساتھ نہیں دینا چاہیے تھا
۔گویا پاکستانی منصوبہ ساز کبوتر کی طرح آنکھیں بند کئے انتظار کرتے کہ امریکہ افغانستان میں اپنی گرفت مضبوط کرنے کے بعد پاکستان کا رخ کرے، ہمارے اوپر دبائو بڑھائے اور آخرکار ایٹمی ہتھیاروں کے کنٹرول کے حوالے سے کوئی اپنا من پسند فارمولا ماننے پر مجبور کر دے؟
صدشکر کہ پاکستانی حکومتوں اور اداروں نے ایسا نہیں کیا۔ انہوں نے یہ حماقت کرنے کے بجائے امریکہ کو افغانستان کی دلدل میں پھنسایا، الجھایا ، وقت لیا ، حتیٰ کہ امریکہ کے لئے اپنے ایجنڈے پر عمل کرنا ممکن نہیں رہا۔
ڈائریکٹوریٹ ایس اس حوالے سے بہت کچھ بتاتی ، سکھاتی ہے۔ اس میں پاکستانی اداروں کے حوالے سے بعض غلط مغالطے اور بے بنیاد الزامات بھی ملتے ہیں۔تاہم میرے نزدیک امریکی مصنف کا بیان کردہ وہ سچ اہم ہے جو پاکستانی اداروں کے کردار پر روشنی ڈالتا ہے
اگر سی آئی اے پاکستانی ایجنسی آئی ایس آئی کے بارے میں یہ شکوہ یا غصہ رکھتی ہے کہ اس نے پاکستانی مفاد کا خیال رکھا اور امریکیوں کو کھل نہیں کھیلنے دیا ، تو یہ امریکیوں یا بھارتیوں کے لئے خفگی کا باعث ہوگا،ہمارے لئے تو باعث مسرت ہے۔

ڈائریکٹوریٹ ایس خاصی ضخیم کتاب ہے، سات سو سے زائد صفحات پر پھیلی اس داستان میںسب سے دلچسپ امریکہ ماہرین کی منصوبہ بندی، خام اندازے اور طرح طرح کے حربوں کی ناکامی کی تفصیل پڑھنا ہے۔ 2010،2011 ء کا ذکر آتا ہے، سٹیو کول امریکی جنرل پیٹریاس کی خام خیالی کا ذکر کرتا ہے جنہیں امید تھی کہ امریکہ اگر کچھ مزید قوت صرف کرے تو طالبان کو فوجی شکست دینا ممکن ہے ۔
آج ہم سب جانتے ہیں کہ جنرل پیٹریاس خود تاریخ کے کوڑے دان میں جا چکے ہیں، امریکی اپنا تمام زور لگا کر نڈھال ہوگئے۔ افغان طالبان مگر آج بھی افغانستان کے منظرنامے میں بڑی قوت کے طور پر موجود ہیں۔ ہمارے ہاں بعض کردار مختلف وجوہات کی بنا پر معتوب ہوئے، سیاسی طور پر بھی آج کوئی ان کے حق میں کلمہ خیر کہنے کو تیار نہیں۔ سٹیو کول کی کتاب میںان کاتاثر مختلف انداز میں بنا۔ان میں جنرل کیانی اور ان کے دست راست جنرل شجاع پاشا شامل ہیں۔ جنرل کیانی کا شمار ان بدقسمت لوگوں میںہوتا ہے ، جن کا کوئی دفاع کرنے کو تیار نہیں۔کتاب ’’ڈائریکٹوریٹ ایس ‘‘نے البتہ جنرل کیانی اورجنرل پاشا کے ساتھ ناانصافی نہیں کی۔اس سے معلوم ہوا کہ جنرل کیانی اور جنرل پاشا مسلسل امریکی دبائو کی مزاحمت کرتے رہے۔ وہ پاکستان کے لئے دستیاب حالات میں بہترین آپشنز ڈھونڈتے، امریکی عسکری ماہرین کو قائل کرتے اور اپنے ملک کے لئے زیادہ سے زیادہ گنجائش حاصل کرتے نظر آئے۔ جنرل پاشا جن پر ہمیشہ ، ہر طرف سے تیر ہی برستے دیکھے ہیں۔ ان کے بارے میں سی آئی اے کے پاکستان میں سٹیشن چیف کا جھنجھلا یا ہوا جملہ (بلکہ ایک طرح کی گالی)پڑھ کر اچھا لگا۔ سی آئی اے کے لوگ چڑ کر کہتے تھے کہ یہ بڑا… بندہ ہے۔سٹیو کول نے بتایا کہ جنرل کیانی اور پاشا بار بار افغانستان جاتے اور حامد کرزئی کو سمجھاتے،’’ امریکی یہاں سے آخرکار چلے جائیں گے، تمہارا واسطہ ہمارے(پاکستان کے) ساتھ رہنا ہے۔ ہمارے ساتھ بات کرو، ہم طالبان سے تمہارے مذاکرات بھی کراد یں گے۔‘‘یہ اور بات کہ کرزئی اس کی جرات نہ کر پایا۔ کتاب کا ایک پورا باب ریمنڈ ڈیوس پر ہے۔ جنرل پاشا کو ہمیشہ اس پر معتوب کیا جاتا ہے۔ سٹیو کول نے اس معاملے کے پوشیدہ پہلو بھی واضح کئے ۔اس نے لکھا کہ کس طرح سی آئی اے کا پاکستان میں عمل دخل بہت بڑھ گیا تھا۔ امریکی ان دنوں پاکستان پردبائو بہت بڑھا چکے تھے۔ پنٹا گون چاہتا تھا کہ افغانستان کی طرح پاکستان بھی امریکیوں کو اپنی سرزمین پر کسی بھی ٹارگٹ کو پکڑنے کی اجازت دے ۔ پاکستانی فوج اس کے لئے کسی بھی صورت تیار نہیں تھی۔ امریکیوںنے حل یہ نکالا کہ ڈپلومیٹس کی شکل میںسی آئی اے کے مختلف فیلڈ ایجنٹس، کنٹریکٹرز کو بھیج دیاجو مختلف روپ میں امریکہ کے لئے جاسوسی کررہے تھے۔ ریمنڈ ڈیوس کی گرفتاری سے فائدہ اٹھا کر پاکستانی ایجنسی نے اس امریکی منصوبے کو بے نقاب کیا اور انہیں پسپا ہونے پر مجبور کر دیا۔ ریمنڈ ڈیوس کی گرفتاری کے بعد جنرل پاشا نے سی آئی چیف لیون پنیٹا سے یہ پوچھا کہ کیا ڈیوس سی آئی اے کا ایجنٹ ہے؟ سی آئی اے چیف نے انکار کیا کہ اس طرح ان کا پورا منصوبہ بے نقاب ہوجاتا۔جنرل پاشا جانتا تھا کہ ریمنڈ ڈیوس سی آئی اے ایجنٹ ہے، دانستہ طور پر انہوں نے اسے مزید قانونی دلدل میں دھنسنے دیا، حتیٰ کہ امریکی اس کی بحفاظت واپسی سے مایوس ہوگئے۔ تب سی آئی اے چیف نے تسلیم کیا کہ یہ سی آئی اے کے لئے کام کر رہا تھا اور ہم نے پہلے غلط جواب دیا۔پھر جنرل پاشا نے ریمنڈ ڈیوس کی واپسی کے لئے دیت کی ادائیگی والا راستہ نکالا۔ ریمنڈ ڈیوس کی واپسی سے مگر پاکستان کو نقصان نہیں ہوا، بلکہ اس سے سی آئی اے کو اپنے فیلڈ ایجنٹس واپس بلانے پڑے۔ آئی ایس آئی کے ایک اور سابق سربراہ جنرل محمود کے بارے میں ہمارے میڈیا میں ہمیشہ تحقیر آمیز انداز میں تذکرہ ہوتا ہے، ان کے تبلیغی جماعت میں جانے، تصویریں نہ بنوانے پر مضحکہ اڑایا جاتا ہے۔ سٹیو کول نے 2007 ء میں ایک اہم امریکی عہدے دار کی جنرل محمود سے ملاقات کی تفصیل بیان کی ہے۔ باریش محمود اس وقت تبلیغی جماعت سے وابستہ ہوچکے تھے۔ ان دنوں مشرف کے خلاف وکلا تحریک چل رہی تھی۔ جنرل محمود نے امریکی مہمان کو کہا کہ مشرف کاکھیل اب ختم ہوچکا ہے۔ محمود نے انگریزی محاورہ استعمال کرتے ہوئے کہا کہ مشرف نے اپنے پیر، پنڈلی، گھٹنے، ران غرض کئی جگہوں پر گولی مار کر بیڑا غرق کر دیا ہے۔ امریکیوں کو جنرل محمود نے مشورہ دیا کہ وہ افغانستان میں کسی بھی طور پر نہیں جیت سکتے، افغانستان کا مستقبل صرف اور صرف طالبان ہیں، ان کے ساتھ مذاکرات کر لیں، یہی حل ہے۔ سٹیو کول نے لکھا کہ جنرل محمود نے جو کہا ، وہ سو فی صد درست نکلا ،مگر 2007 ء میں امریکی کسی بھی صورت میں یہ بات سننے اور ماننے کو تیار نہیں تھے۔ ان کا خیال تھا کہ وہ اپنی عظیم جنگی قوت کے ساتھ افغانستان میں تحریک مزاحمت کو کچل دیں گے۔ اسامہ بن لادن کے قتل کے لئے کیا جانیو الے آپریشن ایبٹ آباد کی تفصیل بڑی دلچسپ ہے۔ اسامہ بن لادن نے اس کمپائونڈ میں دن کیسے گزارے ، کن لوگوں کو خطوط لکھے، وہ ایران اور عرب سپرنگ کے بارے میں کیا سوچتا تھا اور آپریشن کے بعد پاکستانی ادارے امریکہ کے خلاف کیا سوچ رہے تھے…۔ اس کی تفصیل کسی اور نشست میں۔
عامر ہاشم خاکوانی

Advertisements